Monday, October 24, 2016

میں!

خود کبھی گرفتار نہ ہوسکا جو اپنےاندازِ گفتار میں
میں اُسی ادھوری داستان کی ایک مکمل کتاب ہوں۔

Monday, October 3, 2016

تنہائیوں کے ہجوم میں

میں آج  خود سے دور اس حجوم میں بیٹھا ہوں
وقت کا ہر لمہہ میرے تعاقب میں مجھے ڈھونڈتا ہے

ہمذات مجھ سے مخاطب ہے سرِ محفل  تنہائی میں
ذکر رہا ہےکچھ ذہن کےفتور کچھ اپنے بےجاغرور کا

یاد کر رہا ہوں خوشی کےوہ لمہے شبِ تنہا ئی میں
لُٹا چکاہوں جو پل تلاشِ منزل کی جستجو میں اک صبح میں

تجھ سے بات کرنے کو در و دیوار ہی تو تھے ضرف میرے پاس
اب کامرانیاں مجھے ہجھوم میں اکیلا کیئےجاتی ہیں بار بار

میں اکیلا ہی رواں ہوں اپنے خدا کی تلاش میں اب
اک حقیقت سے بھاگ کر اک حقیقت کی تلاش میں

میرے سجدوں کو بخش دو اک گناہ کی تعبیرتم بھی
میں مسجودِ تکبر ہوں کوئی رعیا کار نہیں ہوں میں